”کمر، ٹانگوں، گٹھنوں، یا جسم میں کہیں بھی درد ہو۔ صبح ، دوپہر، شام یہ چٹنی کھا ؤ، ہر درد سے نجات پاؤ۔ جسم کا جوڑ جوڑ لو ہے کی طرح مضبوط ہو گا۔“

یہ جو سفر کرنے والا درد ہے کبھی ادھر ادھر یہ گیسٹرائیٹس ہے یہ گیس ہے

جس کو آپ لوگ ری کی درد کہتے ہی بادی کی درد کہتے ہیں ۔ بہترین علاج۔ ادرک لہسن پودینہ انار دانہ ۔ جتنے پین کلرز ہو تے ہیں نا یہ آپ کے خ و ن کو پتلا کر تے ہیں اور یہ چاروں چیزیں خ و ن کو پتلا کر تی ہیں یہ سو بیماریوں کا علاج۔ ادرک پودینہ انار دانہ کی چٹنی بنا ؤ۔

حسبِ ذائقہ اس میں سبز مرچ ملا ؤ، اس کی چٹنی بنا لو ہر کھانے کے ساتھ دو چمچ استعمال کر و صبح بھی دوپہر بھی شام بھی یہ جو سفر کرنے والا درد ہے، ختم ہو جا ئے گا۔ درحقیقت عمر بڑھنے کے ساتھ ہڈیاں بھی کمزور ہونے لگتی ہیں جس کے باعث جوڑوں کا درد لوگوں کو اپنا شکار بنالیتا ہے تاہم اس میں کمی لانا یا بچنا اتنا بھی مشکل کام نہیں درحقیقت کچھ غذائیں، ورزشیں اور گھریلو اشیاءآپ کے جوڑوں کے درد میں قدرتی طریقے سے نمایاں کمی لاسکتے ہیں

جس کی طبی سائنس نے بھی تائید کی ہےمتعدد طبی تحقیقی رپورٹس میں یہ بات سامنے آچکی ہے کہ ادرک کے اندر ایسی خاصیت ہوتی ہے جو جوڑوں کے درد کے لیے استعمال کی جانے والی ادویات کا اثر بڑھا دیتی ہے۔ مگر ادویات کے بغیر بھی یہ کافی مفید ثابت ہوتی ہے، اس کے لیے ادرک کو پیس کر سفوف کی شکل میں استعمال کریں یا اس کے باریک ٹکڑے کرکے اسے چائے کے لیے ابالے جانے والے پانی میں 15 منٹ تک ڈبو کر رکھیں،

اس کا مستقل استعمال جوڑوں کے درد میں کمی لانے کے لیے بہترین ثابت ہوگا۔ ایک کورین تحقیق میں یہ بات سامنے آئی ہے کہ جوڑوں کے درد میں مبتلا افراد کی تکلیف میں اس وقت کمی آگئی جب انہیں مختلف اقسام کے مصالحوں کی خوشبو سونگھائی گئی جن میں کالی مرچ، گرم مصالحہ اور دیگر شامل تھےاگر تو کسی کے ہاتھوں کے جوڑوں میں تکلیف ہے

تو یہ سننے میں تو عجیب لگے گا مگر ہر باورچی خانے میں کیے جانے والا یہ عام سا کام درحقیقت اس تکلیف میں کمی لانے کا باعث بنتا ہے۔ سب سے پہلے تو اپنے ہاتھ گرم پانی میں کچھ دیر کے لیے ڈبو دیں تاکہ پٹھوں اور جوڑوں کو سکون ملے اور ان کی اکڑن کم ہو۔ اس کے بعد برتن دھولیں۔

آپ کو اس کے لیے دو پلاسٹک کے ڈبوں کی ضرورت ہوگی، ایک میں ٹھنڈا پانی اور کچھ آئس کیوبس بھردیں جبکہ دوسرے میں ایسا گرم پانی ہو جس کا درجہ حرارت آپ چھونے پر برداشت کرسکیں۔ پہلے اپنے تکلیف دہ جوڑوں ٹھنڈے پانی والے ڈبے میں ایک منٹ کے لیے ڈبو دیں

اور اس کے بعد تیس سیکنڈ تک گرم پانی والے ڈبے میں متاثرہ جگہ کو ڈبو دیں۔ اسی طرح ڈبوں کو پندرہ منٹ تک بدلتے رہیں، مگر ہر ڈبے میں تیس سیکنڈ تک ہی متاثرہ جگہ کو ڈبوئیں تاہم آخر میں اس کا اختتام ایک منٹ تک ٹھنڈے پانی والے ڈبے میں تکلیف میں مبتلا جگہ کو ڈبو کر کریں۔

Sharing is caring!

Comments are closed.