”گرمی کی لو سے بخار کا ہو نا۔ گرمی کے دنوں میں بس یہ کر لیں اور بیماری سے بچیں۔ پودینہ اور فالسے کے فوائد۔“

موسم بہت زیادہ ٹھنڈا اور کہیں بہت زیادہ گرم ہو رہا ہے

آج کے حوالے سے میں آج آپ کو بتاؤں گی فالسے کے فوائد بھی بتاؤں گی فالسے کا جوس نظام ہاضمہ کے لیے بہترین ہے، انسائیکلو پیڈیا آف ورلڈ Medicinal پلانٹس کے مطابق یہ نہ صرف نظام ہاضمہ کے افعال کو کنٹرول میں رکھتا ہے بلکہ یہ جسم کو ٹھنڈک پہنچانے کے ساتھ جسم میں پانی کی کمی کو دور بھی کرتا ہے۔

کچھ ماہرین کے مطابق فالسے کا جوس پینے سے پیٹ کے درد کا علاج بھی ممکن ہے، جس کے لیے جوس میں تین گرام اجوائن ملائیں اور تھوڑا سا گرم کرکے پی لیں۔فالسے کے بارے میں کہا جاتا ہے کہ یہ ورم میں کمی لاتا ہے جو اسے دل کی صحت کے لیے مفید پھل بناتا ہے، چٹکی بھر کالی مرچ اور نمک کو 50 ملی لیٹر فالسے کے جوس میں ملائیں اور پی لیں۔یہ اینٹی آکسائیڈنٹس سے بھرپور پھل ہے جس سے کینسر کے خطرے کو کم کیا جاسکتا ہے۔یہ ننھا پھل مسلز بنانے میں بھی مددگار ثابت ہوسکتا ہے۔

جس کی وجہ پوٹاشیم اور پروٹین کی موجودگی ہے جو کہ مسلز مضبوط بنانے کے ساتھ پٹھوں کے افعال کو بھی بہتر کرتے ہیں۔پروٹین کی وجہ سے فالسے کھانے کی عادت جسم کو زیادہ توانائی فراہم کرتی ہے اور اس کا شربت بھی اس حوالے سے مددگار ثابت ہوتا ہے۔اس پھل میں کیلشیئم کی مقدار کافی زیادہ ہوتی ہے جو ہڈیوں کو صحت مند بنانے کے لیے ضروری جز ہے، صحت مند ہڈیاں عمر بڑھنے سے ہڈیوں کی کثافت کم ہونے کا خطرہ بھی کم کرتی ہیں۔فالسے میں موجود آئرن خون کی کمی دور کرنے میں مدد دیتا ہے،

آئرن کی کمی خون کی کمی کے ساتھ مختلف طبی مسائل کا خطرہ بڑھاتی ہے جس کی ایک علامت ہر وقت تھکاوٹ طاری ہونا بھی ہے۔فالسے میں مٹھاس عام طور پر نہ ہونے کے برابر ہوتی ہے، پاکستان جرنل آف فارماسیوٹیکل سائنز کے مطابق فالسہ کم شکر والا پھل ہے، جس کا مطلب ہے کہ ذیابیطس اور خون کی شریانوں سے متعلق امراض کے شکار افراد اس سے لطف اندوز ہوسکتے ہیں۔اس پھل کی قدرتی رنگت یعنی جامنی رنگ درحقیقت ایک اینٹی آکسائیڈنٹ کی وجہ سے ہے جو اینتھوسیان سے بھرپور ہوتا ہے۔

یہ کیمیکل ایک ہارمون کولیگن (جو جلد کی لچک اور نرمی کو بہتر بنانے میں مدد دیتا ہے)کو تحفظ فراہم کرتا ہے اور جلد کی جوانی کو بحال کرتا ہے۔ فالسے کا استعمال خون کو بھی صاف کرتا ہے جس سے جلد بھی شفاف ہوتی ہے اور وہ جگمگانے لگتی ہے۔ ودینے کے پتوں میں اینٹی بیکٹیریل خاصیت ہوتی ہے جو کہ جلد پر مہاسے پیدا کرنے والے جراثیم کے خلاف کام کرتے ہیں جبکہ اس میں چہرے کے داغ دھبے بھی صاف کرنے کی صلاحیت ہوتی ہے۔

پودینے کے پتوں کو اچھی طرح پیس لیں اور اس کے بعد جلد کے ان حصوں پر لگائیں جہاں مہاسے یا داغ دھبے ہوں اور تھوڑی دیر لگا رہنے دینے کے بعد چہرہ اچھی طرح دھو لیں۔روزانہ یا ہفتے میں 3 مرتبہ یہ عمل کرنے سے چہرے کی جلد صاف ستھری اور چمکدار ہوجائے گی۔

Sharing is caring!

Comments are closed.