”اگر کہیں پر مل جائیں یہ بال تو چپکے سے اپنے پاس رکھ لینا گردے مثانے کی پتھری کو نکال دیں گے“

خالق کائنات میں اس دنیا کی پیدا کردہ تمام چیزیں صرف انسان کیلئے تخلیق کی ہیں

۔ انسان کی نگاہ جس چیز کو کمتر اور حقیر جانتی دیکھتی ہے ۔لیکن جب وہی نگاہ تحقیق وجستجو بن کر کون ومکاں کی چیزوں کو دیکھتی ہے

دنیا میں اسے ہر چیز خزانہ نظر آتی ہے ۔مکئی کے پودے کا نہایت فالتو سمجھ پھینکے گئے با ل جسے ضائع کردیے جاتے ہیں آج کے فوائد بتائیں گے ۔چھلی یا بھٹہ جسے بھون کر بڑے شونک سے کھایا جاتا ہے ۔پاپ کورن تو آپ نے ضرور کھائیں ہونگے یہ بھی مکئی کی چھلی کے پکے ہوئے دانوں سے بنائے جاتے ہیں۔

آجکل ہمارے شہروں کے سڑکوں کے کنارے ٹھیلوں اور ریڑھیوں پر سبز چھلکوں والی مکئی کی چھلیوں کے درمیان لکڑی کی برادے انگیٹھی کے اندر بھونی چھلیاں فروخت ہوتی ہیں۔ بھوننے سے پہلے سبز چھلکے اُتار کرپھینکنے کے ساتھ ساتھ چھلی سے چپکے ہوئے اس کے نرم ریشمی بال نک ال کر پھینک دیے جاتے ہیں ۔

چھلی کے ان ریشمی بالوں مکئی کے تمام اجزاء پر فوقیت حاصل ہے ۔ قدرت نے مکئی کے بالوں کو پروٹین کاربوہائیڈریٹس ،منرلز او رفائبر جیسے مفید اور میسر اجزاء کا بھرپور نوازا ہے اسی لیے ان کو شوگر ہارٹ اٹیک جسمانی تھکاوٹ ہائی بلڈ پریشر ہائی کولیسٹرول کو کنٹرول کرنے کیلئے استعمال کیا جاتا ہے ۔ مکئی کے بالوں کو تازہ اور خشک کرکے دونوں طرح استعمال کیا جاسکتا ہے ۔ اگر آپ مکئی کے تازہ بالوں کو ایئر ٹائٹ برتن میں ڈال کر ریفریجریٹر میں رکھ دیں

تو دو ہفتوں تک استعمال کرسکتے ہیں۔ خشک کرکے سٹور کیا جائے توا س سے بھی زیادہ عرصے تک ان کو استعمال کیا جاسکتا ہے ۔ ان کو کھانے کی بجائےان کے فوائد سے مستفید ہونے کیلئے ان کی چائے یا قہوہ بنا کر استعمال کیا جاتا ہے ۔ مکئی کے شاندار فوائد جاننے کے بعد اس کی چائے بنانے کا مکمل طریقہ کن لوگوں کو اس سے پرہیز کرنی چاہیے بتائیں گے۔

مکئی کے بال پیشاب کی نالی کی سوزش میں درد سے نجات کی صورت میں کام کرےت ہیں۔ پیشاب کی نالی کے اندر کوٹنگ کرتے ہوئے جلن اور پریشانی کو ختم کرتے ہیں۔ مکئی کے بالوں چائے استعمال کرنے سے نہ صرف مثانے اور پیشاب کی نالی کی سوجن ختم کرنے میں مدد ملتی ہے ۔بلکہ آپ کو پیشاب کرنے میں آسانی ہوجاتی ہے ۔ پیشاب کی نالی میں بیکٹیریا پیدا ہونے کا خطرہ کم ہوجاتا ہے ۔

اس کے علاوہ یوٹی آئی انفیکشن سے نجات حاصل کرنے میں بھی مدد ملتی ہے ۔ مکئی کے بالوں کی چائے زمانہ قدیم سے قدرتی لیکن طاقتور پیشاب آور ایجنٹ کے طور پر استعمال کی جارہی ہے ۔ وہ افراد یا بچے جن کو رات کو اپنے پیشاب پر کنٹرول نہ ہو اور بستر پر پیشاب کرنے کی عادت ہو انہیں رات سونے سے چار پانچ گھنٹے پہلے دن کے وقت اس چائے کا استعمال کروانا چاہیے ۔

موجودہ دور گردے کا سب سے بڑا مرض گردے کی پتھری یا مثانے کی پتھری ہے جب کہ مکئی کے بال گردے کے امراض کیلئے بہت مفید اور مؤثر ہیں ۔ اگر گردے میں پتھری ہو تو پیشاب کے ذریعے نکالنے میں یہ بال بہت مفید ثابت ہوتے ہیں۔ مکئی کے بال 20گرام سرپھوکا 10 گرام لیکر 250 گرام پانی میں اُبال کر رات کو بھگو کر رکھیں ۔ صبح تمام اجزاء کو سردائی کی طرح رگڑ کر چھان لیں اور کچھ عرصہ صبح وشام پئیں۔ انشاء اللہ آپ کوگردے میں پتھری ختم ہوجائیگی اور آپ کو اس مرض میں آفاقہ ہوگا۔

Sharing is caring!

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *