دادی اماں کی بتائی گئی پرانی اور آزمودہ ٹپس

خواتین کو اکثر ایسے گھریلو ٹوٹکوں کی تلاش ہوتی ہے جو ان کی زندگی کو آسان بنا دیں۔

اور گھر میں موجود بزرگ خواتین سے زیادہ اچھے ٹوٹکے کوئی نہیں بتا سکتا۔ کیونکہ ان خواتین کے پاس عمر بھر کا تجربہ موجود ہوتا ہے۔اسی لئے آج ہم آپ کو نانی اور دادی کے آزمودہ دس ایسے نسخے بتا رہے ہیں جو آپ کی زندگی کو سہل کردیں گے۔نان اسٹک برتن کی چمک اور حفاظت کیلئے ۔نان اسٹک برتنوں پر اگر تھوڑا سا تیل مل دیں تو ان کی پالش برقرار رہتی ہے ۔نان اسٹک پتیلوں میں صرف لکڑی یا پلاسٹک کے چمچے استعمال کریں تاکہ نشان نہ پڑیں ۔نان اسٹک پتیلی میں کھانے یا جلنے کے نشان صاف کرنے کیلئے اس میں پانی اور دو چمچ بیکنگ سوڈا ملاکر ابالیں۔ پھر دھوکر ہلکا سا تیل لگائیں ۔

دھنیا کا رس پینے یا تازہ دھنیا چوسنے سے قئے میں آرام مل جاتا ہے ۔ہری مرچیں کاٹنے سے پہلے تیل یا گھی ہاتھوں پر اچھی طرح مل لیا جائے تو جلن نہیں ہوتی ۔منہ کی بدبو دور کرنے کیلئے دن میں دو تین مرتبہ سونف چبالیا کریں ۔ چند ہی دنوں میں منہ کی بدبو دور ہوجائے گی ۔پودوں کے گملوں میں کبھی کبھی بغیر دودھ والی ٹھنڈی چائے چھڑکنے سے گملوں کی مٹی میں کیڑے نہیں رہیں گے ۔آٹے کے ڈبے وغیرہ کو کیڑ لگنے سے بچانے کیلئے ان میں تیز پات رکھ دیں ۔ اس سے کیڑا نہیں لگتا ۔کسی بھی کچے پھل کو پکانے کیلئے اسے اخبار میں لپیٹ کر دو تین دن کیلئے کسی گرم جگہ پر رکھ دیں، پھر پک کر تیار ہوجائے گا۔مچھروں کو بھگانے کیلئے ایک کپ میں تھوڑا پانی اور چند کافور کی گولیاں ڈال کر کمرے میں رکھیں۔

مچھر نہیں آئیں گے۔اوون صاف کرنے کیلئے کھانے کے سوڈے میں تھوڑا پانی شامل کرکے پیسٹ بنائیں اور اسے اوون کی دیواروں اور فرش پر اچھی طرح لگادیں۔ پھر اوون کو آدھے گھنٹے کیلئے کم درجۂ حرارت پر چلائیں۔ اب اوون کو آف کریں۔خستہ و مزیدار پاپ کارن بنانے کیلئے مکئی کے دانوں کو ہمیشہ فریزر میں رکھیں۔ جب پاپ کارن بنانے ہوں، اسی وقت نکالیں اور فوری بنائیں۔چاولوں کو کیڑوں سے بچانے کیلئے ایک کلو کچے چاولوں میں 5 گرام سوکھے پودینے کا پاؤڈر ملاکر رکھیں۔ڈیپ فرائی کی ہوئی غذائیں صحت کیلئے نقصان دہ ہوتی ہیں۔ لہذا سموسوں کو فرائی کرنے کے بجائے بیک کریں۔ کچے سموسوں کو فریز کردیں اور جب ضرورت ہو تو دو گھنٹے پہلے نکال لیں۔ پھر اوون میں کم درجۂ حرارت پر بیک کرلیں۔آلو اور پیاز کبھی ایک ساتھ نہ رکھیں کیوں کہ اس طرح آلو بہت جلد خراب ہوجاتے ہیں۔

Sharing is caring!

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *