”گرم پانی پینےسے کیا ہوگا؟“

زیادہ تر لوگ پانی کو اتنا عام سمجھتے ہیں ۔کہ ایسا لگتا ہے کہ جب چاہیں جیسے چاہیں جتنی مقدار میں چاہیں پانی پی سکتے ہیں

ہمارا ایسا سوچنا غلط ہے پانی دکھنے میں جتنا عام لگتا ہے۔ یہ ہمارے جسم کے سبھی حصوں کو ٹھیک طرح سے کام کروانے اور جسم میں پیدا ہونیوالے زہ ریلے مادوں کو باہرنکالنے کیلئے اتنا ہی ضروری ہے ۔

پیٹ سے لیکر جلد اور وزن کو بڑھانے سے لیکر وزن گھٹانے تک پانی اہم کردار ادا کرتا ہے۔پانی کی سہی مقدار اور اس کے پینے کا سہی وقت اور پانی کو کس طرح پینے سے کیا کیا فائدے ہوتے ہیں اگر اس بارے میں معلومات نہ ہوتو آدمی چاہے کتنی بھی اچھی چیز کیوں نہ کھا لے اس سے کوئی فائدہ نہیں مل پاتا ۔جس کیوجہ سے مستقبل میں بہت سارے صحت کے مسائل کا بھی سامنا کرنا پڑ سکتا ہے ۔

جیسا کہ بدہضمی ، قبض ، گیس ، جگر کی کمزوری ، گردوں کی پتھری ، قوت مدافعت کا کم ہوجانا ، جلد کی الرجی ، چہرے پر داغ دھبوں کا ہونا ، جلد کا آئلی اور خشک ہوجانا ،کھایا پیا جسم کو نہ لگنا ، جسم کے الگ الگ حصوں پر چربی کا جمع ہونا سردرد اور چکر آنا۔وزن بڑھانے یا کم کرنے میں پریشانی کا ہونا ۔رات کو نیند نہ آناجیسی کئی بیماریاں صرف پانی کو غلط مقدار میں پینےکیوجہ سے ہوسکتی ہیں۔

پانی ہمارے لیے اتنا ضروری کیوں ہے اس سے ہمارے جسم میں کیا ہوتا ہے ۔ ہمارے جسم میں تقریبا پچھتر فیصد پانی موجود ہے ۔ ہمارے ذریعے پیے گئے پانی کا استعمال ہمارے جسم میں کے انٹرنل آرگنز ہمارا جگر نظام ہاضمہ اور تقریباً جسم کے سبھی حصوں کو سہی طریقوں سے کام کروانے اور سب سے زیادہ ہمارے جسم کی نالیوں کو زندہ رکھنے میں ہوتا ہے ۔ دن بھر کے کم سے کم کتنا پانی پیا جائے

اگر پانی کی کمی ہوگئی ہے تو کس طرح پتا لگایا جاسکتا ہے ۔ جسم میں پانی کی کمی ہوتے ہے یورین کا رنگ پیلا ہوجاتا ہے خوراک کو ہضم کرنے کی طاقت میں کمی چہرے کی جلد آہستہ آہستہ ڈھیلی اور بے جان ہونے لگتی ہے ۔ شروع میں ہی پانی پینے کے طریقے میں دھیان نہ دیا جائے یہی چیز مستقبل سنگین بیماری کی شکل میں سامنے آنے لگتی ہے۔ اسی لیے ایک مخصوص مقدار میں پانی پینا ضروری ہوتی ہے ۔

پانی میں زیرو کیلوریز ہونے کے باوجود ہمارے جسم کو ہائیڈریٹ رکھنے میں جسم میں سے زہ ریلے مادوں کو باہر نکالنے میں مددگار ہے ،جلد کو صاف رکھتا ہے دماغی طاقت اور آنکھوں کیلئے تقریباً تمام جسم کو کام کروانے انتہائی ضروری ہے کھانا کھائے بغیر کوئی بھی آدمی لمبے وقت تک زندہ رہ سکتا ہے پانی کے بغیر کچھ دن بھی زندہ رہ پانا ممکن نہیں کیونکہ یورن پسینے اور سانس لینے کے مرحلے میں دو لیٹر پانی ہر دن جسم میں سے باہر نکل جاتا ہے جس کو ری سٹور کرنا بہت ضروری ہے ۔

ایک عام آدمی کو دن بھر میں دو سے تین لیٹر پانی ضرور پینا چاہیے جوکہ ایک ایوریج سائز کے گلاس کے حساب سے آٹھ سے بارہ گلاس بنتے ہیں اور گرمی کے موسم میں پسینہ زیادہ نکلتا ہے۔اسی لیے پانی کی تھوڑی مقدار کو بڑھا یا جاسکتا ہے ۔پانی ہمیشہ بیٹھ کر اور آہستہ آہستہ پینا چاہیے جیسا کہ پانی کو منہ میں رکھ کر چند سیکنڈ تک گھمائیں

اور نگل ایسا کرنے سے منہ میں موجود سلائیوا پیٹ میں جاکر اسٹیک پراپرٹیز کو ختم کرنے کا کام کرتا جس سے خوراک کو ہضم کرنے کی طاقت بڑھانے میں مدد ملتی ہے کھڑے ہوکر جلدی پانی پینے سے گردے سہی طریقہ سے فلٹر نہیں کرپاتیں ۔بوتل سے پانی پینے سے پانی کے ساتھ ساتھ باہر موجود بہت ساری گیس ہمارے پیٹ میں چلی جاتی ہے جس سے جوڑوں میں درد شروع ہوہوجاتے ہیں ۔ایک بار میں ایک یا ڈیڑھ گلاس جتنی پیاس ہو اتنا پانی پینا چاہیے ۔

Sharing is caring!

Comments are closed.